Monday | 11 November 2019 | 14 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 333 Category: Worship
Sleeping after Fajr and Asr Namaz

Assalamualaikum,

Can you please let me know if there is any verdict/hadith concerning sleeping after Fajr and Asr prayers? I have often heard people saying one should not sleep after Fajr Namaz as it reduces one's rizq. Is this true?

          الجواب وباللہ التوفیق

It’s Haram to sleep while leaving Fajr Salat. There is no doubt that it causes one to have loss of blessings.

To sleep after praying Fajr Salat without necessity, though it’s not Haram, yet it’s medically harmful and مکروہ (Makrooh) and reason for the deprivation of the sustenance from Allaah T’aala as the first part of the day is for recitation of Qur’aan, remembrance of Allaah T’aalaa, Salat ul Ishraaq and Chasht, then for the yearning for the sustenance meaning it’s time for the earning of the sustenance as it is narrated in several Ahadith. Furthermore, at this time the sustenance is distributed by Allaah T’aalaa as its mentioning is present in the ضعیف (Da’eef) narrations of Ibne’ ‘Abbas رضی اللہ عنہ ,Hazrat Fatimah رضی اللہ عنہا , and Hazrat Uthmaan bin ‘Affaan رضی اللہ عنہ, therefore, the فقہا (Jurists) have declared sleeping at this time to be مکروہ (Makrooh).

عن عمرو بن عثمان بن عفان ، عن أبیہ قال : قال رسول اللّٰہ ﷺ : ’’ الصبحۃ تمنع الرزق ‘‘ ۔ وفي ہامشہ : قال الشارح أحمد محمد شاکر : وفي الحدیث انہ نہی عن الصبحۃ ؛ وہي النوم أول النہار ؛ لأنہ وقت الذکر ثم وقت طلب الکسب ۔ (مسند احمد ،رقم : ۵۳۰)

However, it must be clear that there is limit to the impermissibility of sleeping in the morning. It’s clarified by another narration in which Nabi صلی اللہ علیہ و سلم said that Allaah T’aalaa distributes the sustenance of the creation from the dawn till sunrise, meaning those people who remain negligent during this whole time they are deprived of the blessing of the sustenance. It is determined from this Hadith that forbiddance of sleeping is for the whole duration from dawn till sunrise, therefore, if a person remains busy in the تسبیحات (remembrance of Allaah T’aalaa) after Fajr for short while and sleeps after Salat ul Fajr then no قباحت وکراہت (deficiency and abomination) will remain for him.

عن فاطمة بنت محمد صلی اللہ علیہ وسلم قالت: مرَّ بي رسول اللہ -صلی اللہ علیہ وسلم- وأنا مضطجعة متصبحة، فحرکني برجلہ ثم قال: یا بنیّة قومي واشہدي رزق ربّک، ولا تکوني من الغافلین؛ فإن اللہ یقسم أرزاق الناس ما بین طلوع الفجر إلی طلوع الشمس“ إسنادہ ضعیف (شعب الإیمان، ۴۴۰۵، فصل في ا لنوم الذي نعمة اللہ الخ)

ورأی عبد اللّٰہ بن عباس ابنًا لہ نائمًا نومۃ الصبحۃ، فقال لہ: أتنام في الساعۃ التي تقسم فیہا الأرزاق۔ ونوم الصبحۃ یمنع الرزق؛ لأن ذٰلک وقت تطلب فیہ الخلیقۃ أرزاقہا، وہو وقت قسمۃ الأرزاق فنومہ حرمان إلا لعارضٍ أو ضرورۃ وہو مضر جدا بالبدن لا رخائہ البدن۔ (زاد المعاد لابن القیم ۴؍۲۴۱-۲۴۲)

عن عمرۃ قالت : سمعت أم المؤمنین (ہي عائشۃ رضي اللّٰہ عنہا) تقول : سمعت رسول اللّٰہ ﷺ یقول : ’’ من صلی صلاۃ الفجر ‘‘ أو قال : ’’الغداۃ، فقعد في مقعدہ ولم یلغ بشيء من أمر الدنیا یذکر اللّٰہ عز وجل حتی یصلي الضحی أربع رکعات خرج من ذنوبہ کیوم ولدتہ أمہ ‘‘ ۔ (ص/۵۵ ، فضل الذکر بعد صلاۃ الفجر)

وفیہ أیضًا : عن سہل بن معاذ عن أبیہ رضي اللّٰہ عنہ قال : قال رسول اللّٰہ ﷺ : ’’ من صلی صلاۃ الفجر ثم قعد یذکر اللّٰہ عز وجل حتی تطلع الشمس وجبت لہ الجنۃ ‘‘ ۔ (ص/۵۵ ، فضل الذکر بعد صلاۃ الفجر)

قال في الہندیة: ویکرہ في أول النہار وفیما بین ا لمغرب والعشاء (۵/۳۷۶، دار الکتاب دیوبند)

ما في ’’ الموسوعۃ الفقہیۃ ‘‘ : النوم الحرام ؛ ہو النوم بعد دخول وقت الصلاۃ ، وہو یعلم أنہ یستغرق في النوم الوقت کلہ ، أو ینام مع ضیق الوقت ۔ (۴۲/۱۷ ، نوم)(۲) ما في ’’ الموسوعۃ الفقہیۃ ‘‘ : یکون النوم مکروہا في مواطن منہا : ۔۔۔۔۔۔۔۔ والنوم بعد صلاۃ الفجر ؛ لأنہ وقت قسمۃ الأرزاق ۔ (۴۲/۱۷ ، نوم)

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 333 Category: Worship
فجر اور عصر نماز کے بعد سونا

السلام علیکم

برائے مہربانی کیا آپ بتاسکتے ہیں کہ فجر اور عصر کے بعد سونے کے بارے میں  کوئی حکم حدیث ہے؟ میں نے اکثر لوگوں کو کہتے  سنا ہے کہ فجر کے بعد نہیں سونا چاہئے کیونکہ اس سے رزق کم ہوجاتا ہے۔  کیا یہ صحیح ہے؟

الجواب وباللہ التوفیق

فجر کی نماز چھوڑکر سونا حرام ہے،اس سے بے برکتی میں تو شبہ نہیں ہے۔

نماز فجر ادا کرنےکے بعد  بلا ضرورت سونا اگرچہ حرام نہیں ہے،

لیکن طبی اور جسمانی اعتبار سے نقصان دہ  اور مکروہ ہے،اور رزقِ خداوندی سے محرومی کا سبب بھی ہے، کیونکہ دِن کا اول حصہ تلاوت ،ذکر، نمازاِشراق وچاشت، پھر طلبِ کسب؛ یعنی روزی کمانے کا وقت ہوتا ہے،جیساکہ متعدد احادیث میں یہ مضمون موجود ہے،نیز اس وقت حق تعالیٰ کی جانب سے  روزی تقسیم کی جاتی ہے،جیساکہ ابن عباسؓ ،حضرت فاطمہ اور حضرت عثمان ابن عفان ؓ کی روایات ضعیفہ میں اس کا ذکر موجود ہے، اس لئے فقہاء نے اس وقت سونے کو مکروہ قرار دیا ہے۔

عن عمرو بن عثمان بن عفان ، عن أبیہ قال : قال رسول اللّٰہ ﷺ : ’’ الصبحۃ تمنع الرزق ‘‘ ۔ وفي ہامشہ : قال الشارح أحمد محمد شاکر : وفي الحدیث انہ نہی عن الصبحۃ ؛ وہي النوم أول النہار ؛ لأنہ وقت الذکر ثم وقت طلب الکسب ۔ (مسند احمد ،رقم : ۵۳۰)

لیکن واضح  رہے کہ صبح کے وقت سونے کی ممانعت کی بھی حد ہے ،جس کی وضاحت ایک دوسری روایت سے ہوتی ہے جس میں اللہ کے نبی نے فرمایا کہ اللہ تبارک وتعالی صبح صادق سے لے کر طلوع آفتاب تک مخلوق کے لیے رزق تقسیم کرتے ہیں یعنی جو لوگ اس پورے وقت میں غافل رہتے ہیں وہ رزق کی برکت سے محروم رہتے ہیں اس حدیث سے یہ بات معلوم ہوتی ہےکہ ممانعت صبح صادق سے لے کر طلوع آفتاب تک پورے درمیانی وقت میں سونے میں ہے؛ لہٰذا اگر کوئی شخص نماز فجر کے بعد تھوڑی دیر تسبیحات وغیرہ میں لگا رہے اور سوج طلوع ہونے کے بعد سوئے تو اس کے حق میں کوئی قباحت وکراہت نہیں رہے گی۔

 عن فاطمة بنت محمد صلی اللہ علیہ وسلم قالت: مرَّ بي رسول اللہ -صلی اللہ علیہ وسلم- وأنا مضطجعة متصبحة، فحرکني برجلہ ثم قال: یا بنیّة قومي واشہدي رزق ربّک، ولا تکوني من الغافلین؛ فإن اللہ یقسم أرزاق الناس ما بین طلوع الفجر إلی طلوع الشمس“ إسنادہ ضعیف (شعب الإیمان، ۴۴۰۵، فصل في ا لنوم الذي نعمة اللہ الخ)

ورأی عبد اللّٰہ بن عباس ابنًا لہ نائمًا نومۃ الصبحۃ، فقال لہ: أتنام في الساعۃ التي تقسم فیہا الأرزاق۔ ونوم الصبحۃ یمنع الرزق؛ لأن ذٰلک وقت تطلب فیہ الخلیقۃ أرزاقہا، وہو وقت قسمۃ الأرزاق فنومہ حرمان إلا لعارضٍ أو ضرورۃ وہو مضر جدا بالبدن لا رخائہ البدن۔ (زاد المعاد لابن القیم ۴؍۲۴۱-۲۴۲)

عن عمرۃ قالت : سمعت أم المؤمنین (ہي عائشۃ رضي اللّٰہ عنہا) تقول : سمعت رسول اللّٰہ ﷺ یقول : ’’ من صلی صلاۃ الفجر ‘‘ أو قال : ’’الغداۃ، فقعد في مقعدہ ولم یلغ بشيء من أمر الدنیا یذکر اللّٰہ عز وجل حتی یصلي الضحی أربع رکعات خرج من ذنوبہ کیوم ولدتہ أمہ ‘‘ ۔ (ص/۵۵ ، فضل الذکر بعد صلاۃ الفجر)

وفیہ أیضًا : عن سہل بن معاذ عن أبیہ رضي اللّٰہ عنہ قال : قال رسول اللّٰہ ﷺ : ’’ من صلی صلاۃ الفجر ثم قعد یذکر اللّٰہ عز وجل حتی تطلع الشمس وجبت لہ الجنۃ ‘‘ ۔ (ص/۵۵ ، فضل الذکر بعد صلاۃ الفجر)

قال في الہندیة: ویکرہ في أول النہار وفیما بین ا لمغرب والعشاء (۵/۳۷۶، دار الکتاب دیوبند)

ما في ’’ الموسوعۃ الفقہیۃ ‘‘ : النوم الحرام ؛ ہو النوم بعد دخول وقت الصلاۃ ، وہو یعلم أنہ یستغرق في النوم الوقت کلہ ، أو ینام مع ضیق الوقت ۔ (۴۲/۱۷ ، نوم)(۲) ما في ’’ الموسوعۃ الفقہیۃ ‘‘ : یکون النوم مکروہا في مواطن منہا : ۔۔۔۔۔۔۔۔ والنوم بعد صلاۃ الفجر ؛ لأنہ وقت قسمۃ الأرزاق ۔ (۴۲/۱۷ ، نوم)

واللہ اعلم بالصواب