Monday | 19 August 2019 | 18 Dhul-Hajj 1440

Fatwa Answer

Question ID: 413 Category: Worship
Salah with mic in hand

Assalamualikum,

I have a question regarding praying Salah behind an Imam (non Hanafi) holding microphone while leading Salah. In our city at one Masjid I have seen the Imam holding the mic in Salah starting from takbeer tahreema. Sometime takbeer tahreema is done with one hand raised as the other hand is holding mic near the mouth and everytime to say Allahuakbar the mic is lifted near the mouth and lastly when in tashahud the mic is left on ground and picked up again before getting up or for salam. 

All the mic movements can be heard as the mic makes sound when moved, kept on ground, and picked up, etc. 

Can you please clarify if Salah is accepted or does the Salah need to be repeated.

Jazak Allah Khair

الجواب وباللہ التوفیق

In the described situation, there is danger of عمل ِکثیر (‘Aml-e-Katheer) and with عمل ِکثیر (‘Aml-e-Katheer) in Salaat, the Salaat becomes فاسد (Faasid), and the Jurists have described the meaning of عمل ِکثیر (‘Aml-e-Katheer) as that action whose doer doesn’t look like a person praying Salaat, or as if a small action is done repeatedly during one رکن (rukan) of Salaat though with one hand only, therefore, if this action is done three times in a رکن (rukan) then there is danger of Salaat becoming فاسد (Faasid), even if it’s not still it’s definitely مکروہ (Makrooh) while nowadays there are alternate equipment available. Further, this situation is against خشوع و خضوع (Concentration and Devotion). Therefore, the Sallaat behind him will be valid, there is no need to repeat it, but should tell the Imaam about this action with wisdom and prudency that this action is مکروہ (Makrooh), therefore it should be avoided.

العمل الكثير يفسد الصلاة والقليل لا. كذا في محيط السرخسي واختلفوا في الفاصل بينهما على ثلاثة أقوال (الأول) أن ما يقام باليدين عادة كثير ۔۔(والثاني) أن يفوض إلى رأي المبتلى به وهو المصلي فإن استكثره كان كثيرا وإن استقله كان قليلا وهذا أقرب الأقوال إلى رأي أبي حنيفة - رحمه الله تعالى -.(والثالث) أنه لو نظر إليه ناظر من بعيد إن كان لا يشك أنه في غير الصلاة فهو كثير مفسد وإن شك فليس بمفسد وهذا هو الأصح. هكذا في التبيين وهو أحسن. كذا في محيط السرخسي وهو اختيار العامة كذا في فتاوى قاضي خان والخلاصة {فتاوی عالمگیری: النوع الثاني في الأفعال المفسدة للصلاة)

’’ کل عمل ھو مفید لا بأس للمصلی و قد صح عن النبي إنہ سلت العرق عن جبھتہ وکان إذا قام من سجودہ نفض ثوبہ یمنۃأو یسرۃ ‘‘الفتاوی الھندیۃ :۱/۱۰۵۔

ویفسدہا کل عمل کثیر لیس من أعمالہا ولا لإصلاحہا... وفي الشامیة أن ما یعمل عادة بالیدین کثیر وإن عمل بواحدة کالتعمم وشدّ السراویل، وما عمل بواحدة قلیل... الثالث: الحرکات الثلث المتوالیة کثیر وإلا فقلیل. (در مختار مع الشامي: ۲/۳۸۵) 

واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 413 Category: Worship
دوران ِنماز امام کا بار بار مائک ہاتھ میں لینا

امام حنفی نہیں ہیں جو پوری نماز مائک ہاتھ میں لے کر پڑھاتے ہیں، کبھی تکبیر تحریمہ کے وقت ایک ہاتھ کانوں تک اٹھاتے ہیں کیونکہ دوسرے ہاتھ سے مائک پکڑکر منہ کے قریب رکھتے ہیں ، اور ہر دفعہ اللہ اکبر کہنے کے لیے ہاتھ میں مائک منہ کے قریب لاتے ہیں، التحیات میں مائک زمین پر رکھ دیتے ہیں اور  سلام کہنے کے لئے پھر ہاتھ سے اٹھا کر منہ کے قریب لاتے ہیں  ، برائے مہربانی واضح کیجئے کہ ان کے پیچھے اس طرح نماز درست ہو جاتی ہے یا دہرانی ہوگی؟

جزاک اللہ خیر

الجواب وباللہ التوفیق

مذکورہ صورت میں عمل ِکثیر کا خطرہ ہے،اور نماز میں عمل کثیر سے نماز فاسد ہو  جاتی ہے اور عمل کثیر  کا مطلب فقہاء نے یوں بیان فرمایا کہ وہ عمل جس کا کرنے والا نمازی نہ دکھائی دے،یا  ایک ہی ہاتھ سے ایک رکن میں کوئی چھوٹا عمل بار بار کیا جائے ،لہذا مذکورہ صورت میں اگر یہ عمل ایک رکن میں تین مرتبہ ہوجائے تو نماز کے فاسدہونے کا خطرہ ہے،اگر نہ بھی ہو تب بھی مکروہ ضرور ہے، جبکہ  موجودہ دور میں  متبادل آلات بھی موجود  ہیں، نیز یہ صورت حال خشوع و خضوع کے خلاف بھی ہےاس لیے ان کے پیچھے نماز تو ادا ہوجائے گی،دہرانے کی ضرورت نہیں ،لیکن امام کو اس عمل کے بارے میں حکمت اور مصلحت سے بتائیں کہ یہ عمل مکروہ ہے،اس لئے اس سے احتیاط کی جائے۔

العمل الكثير يفسد الصلاة والقليل لا. كذا في محيط السرخسي واختلفوا في الفاصل بينهما على ثلاثة أقوال (الأول) أن ما يقام باليدين عادة كثير ۔۔(والثاني) أن يفوض إلى رأي المبتلى به وهو المصلي فإن استكثره كان كثيرا وإن استقله كان قليلا وهذا أقرب الأقوال إلى رأي أبي حنيفة - رحمه الله تعالى -.(والثالث) أنه لو نظر إليه ناظر من بعيد إن كان لا يشك أنه في غير الصلاة فهو كثير مفسد وإن شك فليس بمفسد وهذا هو الأصح. هكذا في التبيين وهو أحسن. كذا في محيط السرخسي وهو اختيار العامة كذا في فتاوى قاضي خان والخلاصة {فتاوی عالمگیری: النوع الثاني في الأفعال المفسدة للصلاة)

’’ کل عمل ھو مفید لا بأس للمصلی و قد صح عن النبي إنہ سلت العرق عن جبھتہ وکان إذا قام من سجودہ نفض ثوبہ یمنۃأو یسرۃ ‘‘الفتاوی الھندیۃ :۱/۱۰۵۔

ویفسدہا کل عمل کثیر لیس من أعمالہا ولا لإصلاحہا... وفي الشامیة أن ما یعمل عادة بالیدین کثیر وإن عمل بواحدة کالتعمم وشدّ السراویل، وما عمل بواحدة قلیل... الثالث: الحرکات الثلث المتوالیة کثیر وإلا فقلیل. (در مختار مع الشامي: ۲/۳۸۵)

واللہ اعلم بالصواب