Saturday | 16 November 2019 | 19 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 458 Category: Business Dealings
Bank loan

Assalamualaikum,

We have purchased a house in India worth 42 Lakhs. We have already given 32 Lakhs in installments. Presently we don't have 10 more Lakhs. So we need to take debt from others. I am 100% against taking bank loans. My relatives are also ready to give the money. My husband thinks what if anything bad happens and no one wants to or able to give the money. He says it is permissible to take money as a bank loan in case if no one gives or no one is able to give the debt money. Presently we haven't taken money from anyone/anywhere. We have paid the last installments in June.

Please tell my husband to be patient and trust Alllah and stop thinking about bank loans.

الجواب وباللہ التوفیق

Masha-Allah, you have a religiosity and your ambition is great. You should make effort to mold the mind of your husband, and narrate the warnings mentioned in the Quran and Hadith, and tell him that the impermissibility of interest-based loans is proven from Quran and Hadith.

Allah ta’ala has proclaimed the declaration of war against persons taking and giving interest. In Hadith, riba is stated to be equivalent to committing adultery with one’s own mother. If any Muslim is told that if you commit adultery with your own mother or get ready to have war with Allaah ta’ala, we will give you money or will fulfill such and such need of yours, would any Muslim be ready for it? It is clear what the condition of the person will be just with this visualization, no description is required.

Although these words may seem harsh but considering the fact that the abhorrence of riba is continuing to dwindle, and it is being taken lightly more and more, and that people, considering unnecessary things to be necessary, are looking to make room in Islam for interest-based loans, and then complain of the narrow-mindedness of the Islamic commandments and the Muslims, especially of ‘Ulama, the need for this analogy to describe its perversion was felt, , with all of this in mind.

Hazrat ‘Umar, may Allah be pleased with him, said, “In order to avoid riba, we used to leave nine parts out of ten of the permissible and would take only one part”, therefore, it is necessary to avoid it as much as possible.

Although the Ulama have given permission for taking interest-based loan to the extent of need in helplessness and extreme constraint when there is no hope of anyone giving a loan, however, in your situation it is impermissible for your husband to take interest-based loan as your relatives are ready to give loans.

Please find below some references from the Quraan and Hadith regarding the impermissibility of interest:

احل اﷲ البیع وحرم الربوا(البقرہ: ۲۷۵)

Allaah ta’ala has made trading permissible and made riba haram.

یمحق اﷲ الربوا ویربی الصدقات (البقرہ: ۲۷۶)

Allaah ta’ala destroys riba and nourishes charities.

So is it not rebellion and competition with Allah to acquire that which Allaah ta’ala destroys?

فان لم تفعلوا فاذ نوا بحرب من اﷲ ورسولہ (البقرہ: ۲۷۹)

But if you do not give it up (riba), then listen to the declaration of war from Allah and His Messenger.

One who has declared war with by Allah and His Rasool, peace and blessings be upon him, and he does not refrain from it, will he meet a good end?

In Hadith, very severe warnings have come on interest-based dealings:

عن جابر رضی اﷲ عنہ لعن رسول اﷲ ﷺآکل الربا وموکلہ وکاتبہ وشاھدیہ وقال ھم سواء (مسلم شریف ج۲ ص ۲۷)(مشکوٰۃ شریف ص ۲۴۴باب الربوا)

Hazrat Jabir, may Allah be pleased with him, says that Rasool ﷺ has cursed the one taking interest, the one giving it, the one writing an interest-based deal, and the witnesses of an interest-based deal and said that they all are sinners and cursed.

عن ابی ہریرۃ رضی اﷲ عنہ قال قال رسول اﷲ ﷺالربوا سبعون جزء ا ایسرھا ان ینکح الرجل امہ (مشکوٰۃ سریف ص ۲۴۶ باب المنھی عنہا من البیوع)

Hazrat Abu Hurairah, may Allah be pleased with him, says that Rasool ﷺ said that a person dealing in interest gets 70 kinds of sins, the lowest sin among them is equivalent to a person commiting adultery with his mother.

It is narrated by Hazrat Abdullah bin Hanzlah, may Allah be pleased with him,  (who was given bath by the angels when he became a martyr):

قال رسول اﷲ ﷺدرھم ربوایا کلہ الرجل وھویعلم اشد من ستۃ و ثلثین زینۃ۔(مشکوٰۃ شریف ص ۲۴۶ باب ابربوا)

Nabisaid: To consume one Dirham of riba (i.e. using it) knowing that it is from interest, in the sight of Allah, is more severe than committing adultery 36 times.

Further, it is in Hadith that Rasool ﷺ has said that there are four people about whom Allaah ta’ala has taken it upon Himself that He will not enter them in Jannah and will not let them taste the blessings of it. Those four are: a habitual drinker, a consumer of riba, a usurper of the orphan’s wealth, and one who is disobedient to his parents. (This narration is in Mustadrak Haakim). (بحوالہ معارف القرآن حضرت مولانا مفتی محمد شفیع صاحب ؒ  ص ۶۸۰،۶۹۱ سورہ بقرہ)

Furthermore, it is in the Hadith: Rasool  ﷺ has said that when the interest-based dealings prevail in any nation then Allaah ta’ala imposes on them the scarcity of the essentials of life, and when bribery prevails in any nation then the awe and fury of the enemies overpower them. (This narration is in Musnad Ahmad). (بحوالہ معارف القرآن ج۱ ص۶۸۱)

Nabihas said that wherever adultery and riba dealings prevail, the people of that locality have invited the wrath of Allah upon themselves. (This narration is in Mustadrak Haakim). 

(بحوالہ معارف القرآن ج۱ ص۶۸۱)

وفی القنیۃ والبغیۃ یجوزللمحتاج الا ستقراض بالربح (الا شباہ والنظائر ص ۱۱۵ ا)(البحرالرائق ج۶ ص ۱۲۶باب الربوا)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 458 Category: Business Dealings
بینک قرض

السلام علیکم ،

ہم نے انڈیا میں ۴۲ لاکھ روپیہ کا ایک گھر خریدا  ہے، ہم نے اب تک قسطوں میں ۳۲ لاکھ روپیہ ادا کیے ہیں، اب ہمارے  پاس مزید دس لاکھ روپیہ نہیں ہیں، اس لیے ہمیں اوروں سے قرض لینا پڑے گا میں سو فیصد بینک سے قرضہ لینے کے خلاف ہوں، میرے رشتہ دار بھی پیسے دینے کے لیے تیار  ہیں، میرے خاوند کا خیال ہے کہ اگر کوئی بری بات پیش آئے اور کوئی  پیسے دینا نہیں چاہتا یا دے نہیں سکتاتو  وہ کہتے ہیں کہ کیا بینک سے قرضہ لینا جائز ہے، برائے مہربانی  میرے خاوند کو بتائیے کہ وہ  صبر سے رہیں اور اللہ پر بھروسہ کریں اور بینک سے قرضے کے بارے میں سوچنا ختم کردیں۔

ماشاء اللہ آپ کامزاج دینی اور آپ کا جذبہ بہت اچھا ہے،آپ شوہرکو سمجھائیں ،اور قرآن وحدیث میں منقول وعیدیں انہیں سنائیں، اور انہیں بتائیں کہ اس کی حرمت قرآن و حدیث سے ثابت  ہے،حق تعالیٰ نے سود لینے دینے والے سے اعلان جنگ کیا ہے،احادیث مبارکہ میں اسے  اپنی ماں  سے زنا کے برابر قرار دیاگیا ہے،اگر کسی مسلمان سے کہاجائے کہ اگر تم اپنی ماں سے زنا کرو یا اللہ سے جنگ کرنے کے لئے تیار ہوجاؤ اور ہم تم کو پیسہ دیں گے،یا تمہاری فلاں ضرورت کو پورا کریں گے،تو کیا ایک مسلمان اس کے لئے تیار ہوجائے گا؟ظاہر ہے کہ اس تصور سے آدمی کی جو کیفیت ہوگی وہ محتاجِ  بیان نہیں،یہ جملہ اگرچہ سخت ہے لیکن موجودہ معاشرہ میں جو  سود کی قباحت   ختم ہوتی جارہی ہے، اور سودی معاملہ کو جتنا آسان اور ہلکا سمجھا جارہاہے  اور غیر ضروری چیزوں کو ضروری سمجھ کر سودی قرض کی گنجائش اور اسلامی حکم اور مسلمانوں،  خاص طور پر علماء طبقہ سے  متعلق شکایت اور تنگ نظری  کا جو تصور پایاجاتا ہے اس پس منظر میں اس کی قباحت کے لئے اس  تمثیل کی ضرورت محسوس ہوئی،حضرت عمرؓ فرماتے ہیں کہ ہم سود سے بچنے کے لئے حلال کے دس حصوں میں سے نو حصوں کو چھوڑکر ایک حصہ کو لیا کرتے تھے،اس لئے جہاں تک ممکن ہو اس سے گریزکرنا ضروری ہے،اگرچہ فقہاء نے اضطرار اور شدید مجبوری کی صورت میں  جب کہ قرض وغیرہ ملنے کی بھی امید نہ ہو بقدر ضرورت سودی قرض لینے کی اجازت دی ہےلیکن چونکہ آپ کی  صورت حال  میں آپ کے رشتہ دار قرض دینے کے لئے تیار ہیں اس لئے آپ کے شوہر کے لئےسودی قرض لینا جائز نہیں ہے۔

سود کی حرمت سے متعلق قرآن و حدیث کے چند حوالے ملاحظہ فرمائیں:

احل اﷲ البیع وحرم الربوا(البقرہ: ۲۷۵)

اﷲ نے بیع کو حلال کیا ہے اور ربوا(سود) کو حرام کیا ۔

یمحق اﷲ الربوا ویربی الصدقات (البقرہ: ۲۷۶)

اﷲ تعالیٰ سود کو مٹاتا ہے اور صدقات کو بڑھاتا ہے ۔تو جس چیز کو اﷲ مٹاتا ہے اس کو اختیار کرنا کیا یہ اﷲ سے بغاوت اور مقابلہ نہیں  ہے ؟

فان لم تفعلوا فاذ نوا بحرب من اﷲ ورسولہ (البقرہ: ۲۷۹)

اگر سودی معاملہ سے باز نہ آؤ گے تو اﷲ جل جلالہ‘ اور اس کے رسول کی طرف سے جنگ کا اعلان سن لو۔جس کو اﷲ تعالیٰ اور اس کا رسول  جنگ کا اعلان کریں  اور وہ باز نہ آئے تو اس کا خاتمہ بخیر ہوسکتا ہے ؟

احادیث میں  بھی سودی لین دین پر بہت ہی سخت وعیدیں  آئی ہیں :

عن جابر رضی اﷲ عنہ لعن رسول اﷲ ﷺآکل الربا وموکلہ وکاتبہ وشاھدیہ وقال ھم سواء (مسلم شریف ج۲ ص ۲۷)(مشکوٰۃ شریف ص ۲۴۴باب الربوا)

حضرت جابرؓ فرماتے ہیں  کہ رسول اﷲﷺنے سود لینے والے اور دینے والے اور سودی معاملہ کرنے  والے اور سودی معاملہ کے گواہوں  پر لعنت کی ہے اور فرمایا یہ سب برابر کے گنہگار اور ملعون ہیں  ۔

عن ابی ہریرۃ رضی اﷲ عنہ قال قال رسول اﷲ ﷺالربوا سبعون جزء ا ایسرھا ان ینکح الرجل امہ (مشکوٰۃ سریف ص ۲۴۶ باب المنھی عنہا من البیوع)

حضرت ابوہریرہ رضی اﷲ عنہ فرماتے ہیں  کہ رسول اﷲﷺ نے فرمایا، سودی معاملہ کرنے والے کو ستر قسم کے گناہ لاحق ہوتے ہیں  ان میں  سے ادنیٰ درجہ کا گناہ یہ ہے کہ انسان اپنی ماں  کے ساتھ منہ کالا کرے ۔

حضرت عبداﷲ بن حنظلہ رضی اﷲ عنہ (غسیل الملائکہ) سے روایت ہے :

قال رسول اﷲ ﷺدرھم ربوایا کلہ الرجل وھویعلم اشد من ستۃ و ثلثین زینۃ۔(مشکوٰۃ شریف ص ۲۴۶ باب ابربوا)

آنحضورﷺ نے فرمایا ایک سودی درہم کا کھانا (یعنی اپنے استعمال میں  لانا ) جانتے ہوئے کہ یہ سود کا ہے اﷲ کے یہاں  چھتیس مرتبہ زنا سے بھی زیادہ سخت ہے ۔

نیز حدیث میں  ہے: رسول اکرم  ﷺ  کا ارشاد ہے کہ چار آدمی ایسے ہیں  جن کے بارے میں  اﷲ نے اپنے اوپر لازم کر لیا ہے کہ ان کو جنت میں  داخل نہ کریں  گے اور جنت کی نعمت ان کو نہ چکھائیں  گے ،وہ چار یہ ہیں  ، شراب پینے کا عادی ، اور سود کھانے والا، اور یتیم کا مال ناحق کھانے والا ، اور اپنے والدین کی نافرمانی کرنے والا( یہ روایت مستدرک حاکم میں  ہے۔)(بحوالہ معارف القرآن حضرت مولانا مفتی محمد شفیع صاحب ؒ  ص ۶۸۰،۶۹۱ سورہ بقرہ)

نیز حدیث میں  ہے :۔ رسول کریم ﷺ نے فرمایا کہ جب کسی قوم میں  سودی لین دین کا رواج ہوجاتا ہے تو اﷲ ان پر ضروریات زندگی کی گرانی مسلط کر دیتے ہیں  ، اور جب کسی قوم میں  رشوت عام ہوجاتی ہے تو ان پر دشمنوں  کا رعب وغلبہ چھا جاتا ہے (یہ روایت مسند احمد میں  ہے)(بحوالہ معارف القرآن ج۱ ص۶۸۱)

حضور ﷺ  کاارشاد ہے کہ جس بستی میں  زنا اور سودی لین دین پھیل جاتا ہے اس بستی والوں  نے اﷲ کے عذاب کو اپنے اوپر دعوت دے دی (یہ روایت مستدرک حاکم میں  ہے )(بحوالہ معارف القرآن ج۱ ص ۶۸۱)

 وفی القنیۃ والبغیۃ یجوزللمحتاج الا ستقراض بالربح (الا شباہ والنظائر ص ۱۱۵ ا)(البحرالرائق ج۶ ص ۱۲۶باب الربوا)۔

واللہ اعلم بالصواب