Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 47 Category: Worship
New Ehram after Ghusl

Assalamualaikum Warahmatullah

We are planning to perform umrah next month. The journey from my hometown of Hyderabad to Makkah is long. During the travel, lodging and settling down before our group is taken to perform umrah, it is possible that we may get some time to rest up. If ghusl becomes wajib while we are in the state of ihram (due to any possible reasons which make ghusl wajib), what is the ruling in that case? Is it permissible to wear the same ihram after the ghusl or should we change?

JazakAllah Khair

 الجواب وباللہ التوفیق

 Assalamualaikum Warahmatullah

1- While in the state of ihram, if ghusl becomes wajib then it is permissible to perform ghusl. However, it should be noted that one must refrain from using such soaps, shampoo or lotion which have fragrance in it. In addition, the head should not be washed in such a manner that the hair are broken. Similarly, the face and head should not be wiped with a cloth (or towel) as touching the face with a cloth has been disliked while in this state.

2. If there is no impurity on any part of the ihram, the same ihram can be worn again. If there is impurity then it can be washed and reworn. It is also permissible to replace the sheet if needed.

وتغطیۃ ربع الرأس، أو الوجہ کالکل۔(رد المحتار:۳ ؍۴۹۸)

ولا یغطي المحرم رأسہ ولا وجہہ۔ (الفتاویٰ التاتارخانیۃ ۳؍۵۷۷ زکریا)

إذا غطی رأسہ أو وجہہ ولو امرأۃ کلاًّ أو بعضاً بمعتاد وہو ما یقصد بہ التغطیۃ عادۃ کالقلنسوۃ والعمامۃ مخیطاً کان أو غیرہ ودام علیہ زماناً ولو ناسیاً أو عامداً عالماً أو جاہلاً مختاراً أو مکرہاً۔

(غنیۃ الناسک ۲۵۴، کذا في الفتاویٰ الہندیۃ ۱؍۲۴۲، البحر الرائق ۳؍۱۳ زکریا)

ولو غسل راسہ او یدہ بالاشنان فیہ الطیب فان کان من راہ سماہ اشنانا فعلیہ صدقۃ الا ان یغسلہ مرارا فدم ولو غسل راسہ بالحرص والصابون لا روایۃ فیہ وقالو ا لا شیء فیہ لانہ لیس لطیب ولا یقتل کذا فی الغنیۃ واللباب قلت و لینظر حکم الصابون الذی یلین الشعرویقتل الھوام فیہ وفیہ الطیب الظاہو مما ذکر ان فیہ صدقۃ

فقط واللہ اعلم بالصواب

Question ID: 47 Category: Worship
غسل کے بعد نئے احرام کا حکم

السلام علیکم ورحمۃ اللہ

ہم اگلے ماہ عمرے کے لئے جا رہے ہیں۔ ہمارے شہر (یعنی حیدرآباد) سے مکہ مکرمہ کا فاصلہ طویل ہے۔سفر کے دوران، ہوٹل پہنچنے اور گروپ لیڈر کے ساتھ عمرہ کے لئے جانے تک کافی وقت لگے گا۔ ہو سکتا ہے کہ اس دوران ہمیں آرام کا بھی موقع مل جائے ۔ اگر حالتِ احرام میں غسل (کسی بھی غسل کو واجب کرنے والی چیز سے مثلا احتلام) واجب ہو جائے ، تو اس صورت میں ہمارے لئے کیا احکامات ہوں گے؟ کیا غسل کے بعد وہی احرام دوبارہ پہنا جا سکتا ہے یا پھر اس کو تبدیل کرنا ہوگا؟

الجواب وباللہ التوفیق

السلام علیکم ورحمۃ اللہ

(۱)اگر حالت احرام میں غسل واجب ہوجائے تو غسل کیا جاسکتا ہے صرف یہ احتیاط رکھیں کہ خوشبو دار صابن ،شامپو یا لوشن وغیرہ استعمال نہ کریں اورسر بھی اس طرح نہ ملیں کہ سر کے بال ٹوٹ جائیں اور چہرے اور سرکو کپڑے سے نہ پوچھیں ،کیونکہ حالت میں چہرے پر کپڑا لگنے میں کراہت ہے۔

(۲) اگر احرام پر ناپاکی لگی ہوئی نہ ہو تو وہی احرام دوبارہ پہنا جاسکتا ہے اور اگر ناپاکی لگی ہوئی ہو تو اسےدھوکر پہن سکتے ہیں یا دوسری چادر بھی تبدیل کی جاسکتی ہے ۔

وتغطیۃ ربع الرأس، أو الوجہ کالکل۔(رد المحتار:۳ ؍۴۹۸)

ولا یغطي المحرم رأسہ ولا وجہہ۔ (الفتاویٰ التاتارخانیۃ ۳؍۵۷۷ زکریا)

إذا غطی رأسہ أو وجہہ ولو امرأۃ کلاًّ أو بعضاً بمعتاد وہو ما یقصد بہ التغطیۃ عادۃ کالقلنسوۃ والعمامۃ مخیطاً کان أو غیرہ ودام علیہ زماناً ولو ناسیاً أو عامداً عالماً أو جاہلاً مختاراً أو مکرہاً۔

(غنیۃ الناسک ۲۵۴، کذا في الفتاویٰ الہندیۃ ۱؍۲۴۲، البحر الرائق ۳؍۱۳ زکریا)

ولو غسل راسہ او یدہ بالاشنان فیہ الطیب فان کان من راہ سماہ اشنانا فعلیہ صدقۃ الا ان یغسلہ مرارا فدم ولو غسل راسہ بالحرص والصابون لا روایۃ فیہ وقالو ا لا شیء فیہ لانہ لیس لطیب ولا یقتل کذا فی الغنیۃ واللباب قلت و لینظر حکم الصابون الذی یلین الشعرویقتل الھوام فیہ وفیہ الطیب الظاہو مما ذکر ان فیہ صدقۃ

فقط واللہ اعلم بالصواب