Thursday | 14 November 2019 | 17 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 471 Category: Permissible and Impermissible
Trimming eyebrows

Assalamualaikum,

Is it permissible to trim the excess hair from the eyebrows to make them back to a more normal size?

الجواب وباللہ التوفیق

It is impermissible to have eye brows done on the pattern of fashionable sinful women. Doing so falls under the category of changing the creation of Allaah Ta’alaa. However, if a woman’s eye brows are so dense that they look bad then it is permissible to trim them to a normal pattern as adornment for pleasing one’s husband provided doing so there is no resemblance to the transgenders.

عن ابن عمر رضي اللّٰہ عنہما قال: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: من تشبہ بقوم فہو منہم۔ (سنن أبي داؤد، کتاب اللباس / باب في لبس الشہرۃ ۲؍۵۵۹ رقم: ۴۰۳۱ )

قال القاري: أي من شبّہ نفسہ بالکفار مثلاً في اللباس وغیرہ، أو بالفساق أو الفجار، أو بأہل التصوف والصلحاء الأبرار ’’فہو منہم‘‘: أي في الإثم أو الخیر عند اللّٰہ تعالیٰ … الخ۔ (بذل المجہود، کتاب اللباس / باب في لبس الشہرۃ ۱۲؍۵۹)

عن عبد اللّٰہ بن مسعود رضي اللّٰہ عنہ قال: لعن اللّٰہ الواشمات والمستوشمات، والمُتنمِّصات، والمتفلجات للحسن المغیرات خَلْقَ اللّٰہ تعالیٰ، مالي لا ألعنُ من لعن النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم وہو في کتاب اللّٰہ: {مَا اٰتٰکُمُ الرَّسُوْلُ فَخُذُوْہُ} (صحیح البخاري، کتاب اللباس / باب المتفلجات للحسن ۲؍۸۷۸ رقم: ۵۹۳۱ دار الفکر بیروت)

ولابأس بأخذ الحاجبین وشعر وجہہ وجہہ ما لم یشبہ المخنث ۔ (شامي ۹؍۵۳۶ زکریا)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 471 Category: Permissible and Impermissible
بھنویں تراشنا

 

 السلام علیکم

کیا بھنووں کے زائد بال تراشنے کی اجازت ہے تاکہ وہ پھر سے نارمل سائز کی ہو جائیں ؟

الجواب وباللہ التوفیق

فیشن پرست فاجرہ عورتوں کی ہیئت پر بھنویں بنانا جائز نہیں، اور ایسا کرنا تغییر لخلق اللہ کے زمرہ میں آتاہے۔ البتہ اگر کسی عورت کی بھنویں ایسی گھنی ہوں کہ بری معلوم ہوتی ہوں تو عام حالت کے مطابق بطور تزئین شوہر کی خوشنودی کے لئے اُنہیں بنانےکی گنجائش ہے ،جبکہ اس طرح بنانے میں مخنث کی مشابہت بھی نہ ہو ۔

عن ابن عمر رضي اللّٰہ عنہما قال: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: من تشبہ بقوم فہو منہم۔ (سنن أبي داؤد، کتاب اللباس / باب في لبس الشہرۃ ۲؍۵۵۹ رقم: ۴۰۳۱ )

قال القاري: أي من شبّہ نفسہ بالکفار مثلاً في اللباس وغیرہ، أو بالفساق أو الفجار، أو بأہل التصوف والصلحاء الأبرار ’’فہو منہم‘‘: أي في الإثم أو الخیر عند اللّٰہ تعالیٰ … الخ۔ (بذل المجہود، کتاب اللباس / باب في لبس الشہرۃ ۱۲؍۵۹)

عن عبد اللّٰہ بن مسعود رضي اللّٰہ عنہ قال: لعن اللّٰہ الواشمات والمستوشمات، والمُتنمِّصات، والمتفلجات للحسن المغیرات خَلْقَ اللّٰہ تعالیٰ، مالي لا ألعنُ من لعن النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم وہو في کتاب اللّٰہ: {مَا اٰتٰکُمُ الرَّسُوْلُ فَخُذُوْہُ} (صحیح البخاري، کتاب اللباس / باب المتفلجات للحسن ۲؍۸۷۸ رقم: ۵۹۳۱ دار الفکر بیروت)

ولابأس بأخذ الحاجبین وشعر وجہہ وجہہ ما لم یشبہ المخنث ۔ (شامي ۹؍۵۳۶ زکریا)

واللہ اعلم بالصواب