Tuesday | 12 November 2019 | 15 Rabiul-Awal 1441

Fatwa Answer

Question ID: 567 Category: Business Dealings
Is it permissible to invest in the stock market ?

Assalamualaikum

I have heard from numerous scholars that investing in the stock market is permissible yet my parents are adamant that it is not. Also if it is permissible would day trading within the stock market be permissible?

الجواب وباللہ التوفیق

Investment in the stock market is permissible. But there are some conditions for it:

  1. The company one is to buy stocks of its original business must be Halal.
  2. Some assets (fixed assets) of this company should have come into existence. It should not be in the form of cash only.
  3. If the company deals in interest then one should raise objection against it.
  4. At the time of the distribution of the profit one must give the portion of profit derived from interest-based deposit in Sadaqah without the intention of getting reward for it.
  5. The purpose of buying and selling of the shares should not only be balancing the mutual difference in which there is no possession rather its purpose is to become partner in that company and get its annual profit.

(فتاویٰ عثمانی :۳ / ۱۷۷،۱۹۲ وفتاوٰی دار العلوم)

واللہ اعلم بالصواب

 

Question ID: 567 Category: Business Dealings
اسٹاک مارکیٹ میں سرمایہ کاری

میں نے بہت سے علماء سے سنا ہے کہ سٹاک مارکیٹ میں سرمایہ کاری کرنا جائز ہے لیکن میرے والدین اس بات پر مصر ہیں کہ ایسا نہیں ہے، کیا یہ جائز ہے؟ اگر یہ جائز ہے تو کیا صبح سٹاک خرید کر انہیں شام کو بیچنا جائز ہے؟

الجواب وباللہ التوفیق

اسٹارک مارکیٹ میں سرمایہ کاری جائز ہے ۔لیکن اس کے لئے چند شرطیں ہیں ۔

(۱)جس کمپنی کا شیئرز خریدنا ہے اس کا اصل کاروبار حلال ہو۔(۲) اس کمپنی کے کچھ اثاثے (فکسڈ ایسٹس) وجود میں آچکے ہوں، رقم صرف نقد کی شکل میں نہ ہو۔(۳) اگر کمپنی سودی لین دین کرتی ہے تو اس کے خلاف آواز اٹھائی جائے۔(۴) تقسیم منافع کے وقت، نفع کا جتنا حصہ سودی ڈپوزٹ سے حاصل ہوا ہو، اس کو بلانیت ثواب صدقہ کردے۔(۵) شیئرز کی خرید و فروخت کا مقصد محض آپس کا ڈفرنس برابر کرنا نہ ہو جس میں قبضہ بھی نہیں ہوتا بلکہ مقصد اس کمپنی کا حصہ دار بننا اور اس کا سالانہ منافع حاصل کرنا ہو۔ (فتاویٰ عثمانی :۳ / ۱۷۷،۱۹۲ وفتاوٰی دار العلوم)

واللہ اعلم بالصواب